بندوق اور طاقت کے زور پر کوئی مسئلہ حل نہیں ہوتا ہے، ترجمان حکومت بلوچستان فرح عظیم شاہ

کوئٹہ(ڈیلی گرین گوادر) ترجمان حکومت بلوچستان فرح عظیم شاہ نے نے کہا ہے کہ نیشنل ایکشن پلان کے تحت منعقدہ اجلاس میں ناراض بلوچوں کو مذاکرت کے ذریعے قومی دھارے میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا گیاکیونکہ بندوق اور طاقت کے زور پر کوئی مسئلہ حل نہیں ہوتا ہے،بلوچستان حکومت نے 578 ٹریکٹر 50 فیصد سبسڈی میں فراہم کرنے کا سلسلہ شروع کردیا گیا ہے ترقیاتی منصوبوں میں کرپشن کی روک تھام کیلئے ای ٹریڈنگ سسٹم متعارف کرایا جارہاہے۔ یہ بات انہوں نے منگل کو پریس کانفرنس کر تے ہوئے کہی، انہوں نے کہاکہ وزیراعلی کا وژن ہے بلوچستان کی ترقی پر کوئی کمپرومائیز نہ کیا جائے،وزیراعلی کے اقدامات کے نتائج جلد سامنے آئیں گے،فرح عظیم شاہ نے کہا کہ بلوچستان میں صحت کارڈاجراء کے حوالے سے80 فیصد کام مکمل ہوچکاہے،صحت کارڈ کے حامل افراد750اسپتالوں میں علاج کی سہولیات سے مستفیدہوسکیں گے، حکومت نے کسانوں کو کسان کارڈزدینے کابھی فیصلہ کیاہے،کسان کارڈ سے صوبے میں زراعت کے شعبے میں انقلاب آئیگابلوچستان حکومت نے 578 ٹریکٹر 50 فیصد سبسڈی میں فراہم کرنے کا سلسلہ شروع کردیا گیا ہے ترقیاتی منصوبوں میں کرپشن کی روک تھام کیلئے ای ٹریڈنگ سسٹم متعارف کرایا جارہاہے۔انہوں نے کہا کہ پچھلی حکومت نے اپوزیشن کو بھی ترقیاتی فنڈز نہیں دئیے تھے،ہماری حکومت نظر انداز کئے گئے اضلاع کو تیرہ ارب روپے کے فنڈز دے رہی ہے آج صوبے میں تمام جماعتیں ترقی کیلئے ایک پلیٹ فارم پر اکھٹے ہیں،ایک سوال کے جواب میں ترجمان حکومت بلوچستان کا کہنا تھا کہ وزیراعلی عبدالقدوس بزنجو پر سردار یار محمد رند نے جو الزامات عائد کئے ہیں وہ درست نہیں سردار یار محمد رند کے پاس کوئی ثبوت ہے سامنے لائیں، پی ٹی ائی کے وزرا حکومت کا حصہ ہیں،انہوں نے کہا کہ ینگ ڈاکٹر ز کافی مطالبات تسلیم کرلئے گئے ہیں امید ہے کہ مسئلہ جلد حل کرلیا جائے گا، ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ راضگی اور ررضا مندی سیا ست کی خوبصورتی ہے، تین ماہ میں دھرنوں، احتجاج میں کمی آئی ہے حکومت بلو چستان کی سرکاری ملازمین کی جانب توجہ ہے جلدہی انکے مسائل بھی حل کئے جائیں گے، انہوں نے کہاکہ بلو چستان میں 3سو 61واٹر سٹوریج ٹینک اور 162زرعی تالاب بنا ئے جا رہے ہیں، پانی کی کمی پورے پاکستان میں ہے لیکن حکومت بلو چستان کی کوشش ہے کہ واٹر سٹوریج ٹینک ذریعے پانی کی کمی کو پورا کریں، ہما ری کو شش ہو گی کہ ٹیوب ویلز کو شمسی توانائی پر منتقل کیا جائے،87ٹیوب ویلز اور150فری ٹنل فارمز کوشمسی توانائی کے سا تھ منسلک کر دیا گیا ہے،انہوں نے کہاکہ حکومت بلو چستان نے تر قیاتی اسکیمات کے لئے 13ارب سے زائد فنڈز کی منظوری دی ہے اور اب تک پی اینڈ ڈی ڈیپارٹمنٹ نے 83ارب روپے کی تر قیا تی اسکیمات کی منظوری دے چکار ہے،انہوں نے کہاکہ کوئٹہ پیکچ میں روڈ ڈیولپمنٹ،اسٹیڈیم کے پروجیکٹ شامل ہیں، انہوں نے کہاکہ بارڈرز کے ذریعے امپورٹ کو فری کر دیا گیا ہے پنجگور، تربت اور گوادر میں 6کے قریب ٹریڈ پوائنٹ قائم کئے جا رہے ہیں جس سے بے روز گا ری کے خاتمے میں مدد مل سکے گی، انہوں نے کہاکہ سی اینڈ ڈبلیو کے 361بر طرف ملاز مین کو بحال کر دیا گیا ہے،گلو بل پارٹنر شپ ایجو کیشن سسٹم کے تحت 1493ملازمین کا کنٹرنٹ بحال کر دیا گیا ہے اب وہ مستقل کام کریں گے، انہوں نے کہاکہ 197میل نر سنگ اسٹاف کو مستقل کر دیا گیا ہے،بلو چستان پبلک سروس کمیشن کے ذریعے 45ڈی ایس پیز،29سیکشن آفیسرز،18اسسٹنٹ کمشنرز،27تحصیلدار، 62اسسٹنٹ ایس اینڈ جی اے ڈی ڈیپار ٹمنٹ کی پوسٹیں دی گئی ہیں، پرائیویٹ ٹیسٹ کمپنیوں کو ختم کر کے ٹیسٹ کی ذمہ داری تمام ڈیپارٹمنٹ کو سونپ دی گئیں ہیں اور اب یہ ڈیپارٹمنٹ کی ذمہ ہو گی کہ وہ شفافیت کے سا تھ ٹیسٹ اور انٹر ویو کا انعقاد کریں، اردو میڈیم پرائمری اسکولوں کو انگلش میڈیم کے برابر لائیں گے،انہوں نے کہاکہ حکومت بلو چستا ن نے اسمبلی میں 9 بلز پاس کئے ہیں، انہوں نے کہاکہ وزیر اعلیٰ بلو چستان نے نیشنل ایکشن پلان کے اجلاس میں کہا کہ بلوچستان میں رہنے والے تمام لوگ بلو چستان کے مالک ہیں،اجلاس میں ناراض بلوچوں کو مزالرات کے زریعے قومی دھارے میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا گیابندوق اور طاقت کے زور پر کوئی مسئلہ حل نہیں ہوتا ہے تمام ناراض بلوچ رہنماوں کو مذاکرات کی دعوت دیتے ہیں،انہوں نے کہاکہ حکومت کی ترجیع ہے کہ تمام مسائل کو مل بیٹھ کر حل کریں، ینگ ڈاکٹر آئیں ہم مل بیٹھ کر تمام مسائل کا حل نکلا لیں گے،ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ وزیر اعلیٰ بلو چستان نے خود جاکر گوار میں ٹرالنگ کے سسٹم ختم کر وایا ہے،تمام مسائل احسن طریقے سے حل کئے جا رہے ہیں اور آگے بھی ایسے ہی حل کئے جائیں گے، انہوں نے کہاکہ عوام کے سامنے وزیر اعلیٰ میر عبد القدوس بزنجو کی تین ماہ کارکردگی رپورٹ پیش کرنے کارہی ہوں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے